مُشاہد رضوی
پائے کہاں تجلیِ دل دار آفتاب

شہنشاہ سخن استاذ زمن علامہ حسن رضا بریلوی

پائے کہاں تجلیِ دل دار آفتاب
ہیں اُس کے عکس سے در و دیوار آفتاب
اللہ رے تیرے حسنِ نکو کی تجلیاں
ہے پشتِ آئینہ سے نمودار آفتاب
کب حسنِ خود نما کو مکاں سدّ باب ہو
تاباں ہے ہر طرف پسِ دیوار آفتاب
دم بھر ٹھہر گیا تھا جمالِ رُخِ حبیب
اب تک ہے چشم و دل میں ضیا بار آفتاب
رنگینی و فروغِ رُخِ یار کچھ نہ پوچھ
پیدا ہیں کس بناؤ سے گلزار آفتاب
ہر دم خیالِ پردۂ رُخسارِ یار ہے
ہر وقت ہیں نگاہ میں دو چار آفتاب
چشمِ خیال خیرہ ہے اُن کے خیال سے
کیوں کر کہوں کہ ہیں ترے رُخسار آفتاب
پروانوں میں چراغ ستاروں میں ماہتاب
گُل بلبلوں میں ذرّوں میں ہے یار آفتاب
چڑھ جائے کیوں نہ چرخ پر اس افتخار سے
اُترا ہوا ہے صدقۂ دل دار آفتاب
اُس مست کا ہے جلوۂ رُخسار زُلف میں
رکھتی ہے مے کشوں کی شبِ تار آفتاب
ظلمت نہ پوچھیے مرے روزِ سیاہ کی
مانگیں چراغ آئیں جو دو چار آفتاب
مجھ تیرہ روزگار پر اک جلوہ تم کرو
مطلوب ماہتاب نہ درکار آفتاب
تاروں کے پھول پائے تو تارِ شعاع میں
گُوندھے ترے گلے کے لیے ہار آفتاب
وہ نام ہے فروغِ دلِ اہلِ معرفت
جس نے کیا ہے تجھ کو ضیا بار آفتاب
پہنچیں گے کس طرح سے تمہارے جمال کو
ہے آفتاب باغ نہ گلزار آفتاب
لکھتا  بیاضِ صبح پہ خطِ شعاع میں
سنتا اگر حسنؔ سے یہ اشعار آفتاب
0 Responses

Post a Comment

ثمر فصاحت 2013. Powered by Blogger.